الجمعة، 19 صَفر 1441| 2019/10/18
Saat: (M.M.T)
Menu
القائمة الرئيسية
القائمة الرئيسية

المكتب الإعــلامي
ولایہ مصر

ہجری تاریخ    8 من رجب 1438هـ شمارہ نمبر: 02/1438
عیسوی تاریخ     بدھ, 05 اپریل 2017 م

پریس ریلیز

اے مصر کے حکمرانو! تم حلیم و کریم اللہ کے مقابلے میں کتنے بے باک ہو چکے ہو۔

تم لوگوں کی دنیا تباہ کر رہے ہو مگر یاد رکھو،وہ بھی تمہاری آخرت کی بربادی کا سامان کر رہے ہیں

 

اخبار الیوم السابع کے مطابق 3 اپریل2017 ، بروزِ اتوار، مصری صدر عبد الفتاح السیسی نے امریکی ہم منصب ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ  پریس کانفرنس سے قبل ہونے والی ملاقات  کے دوران کہا کہ مصر "دہشت گردی" کے خلاف جنگ میں امریکہ کے شانہ بشانہ کھڑا ہوگا اور ہم اُن تمام کوششوں کی بھر پور حمایت کریں گے جو رواں صدی کے مسئلے کا حل دریافت کرنے کے لیے بروئے کار لائی جائیں گی۔ اس پر ٹرمپ نے اپنے تاثرات کا اظہار ان الفاظ میں کیا "ہم مل کر یہ کام کریں گے۔ ہم دہشت گردی  اور دوسری چیزوں کے خلاف لڑیں گے اور ہم لمبے عرصے تک کے لیے دوست بننے جارہے ہیں۔۔۔  ہمارے درمیان  دلچسپی کی چند باتیں فوری  ہونے جارہی ہیں۔ اور تھوڑی دیر بعد ایک پریس کانفرنس  کے ذریعے ہم ان کا آغاز کرنے جارہے ہیں"۔ ٹرمپ نے واضح کیا" ہم مصر اور مصر کے عوام کے ساتھ اعلیٰ سطح کا تعاون کریں گے، جو ماضی میں امریکہ کی طرف سے کیے جانے والے کسی بھی تعاون سے بڑھ کر ہوگا، میں بس آپ سے صرف اتنا کہوں گا جناب صدر کہ امریکہ میں  میرے جیسا عظیم دوست اور اتحادی آپ کے ساتھ ہے۔"

 

                  مصری صدر نے امریکی بارگاہ پر  سجدہ ریز ہوکر  بندۂ امریکہ ہونے کا ثبوت فراہم کیا اور یہ اطمینان دلایا کہ  اسلام کے خلاف جنگ میں وہ  اپنے امریکی آقاؤں  کا ایک فرمانبردار خادم ہی نہیں ، بلکہ اس جنگ میں ہر اول دستے  کا کردار ادا کرے گا، یعنی وہ مصر یوں کو تہِ تیغ کرنے  اور ان کا خون گرانے پر کمر بستہ ہے۔ مصر کو بھی  وہائٹ ہاؤس میں بیٹھے اپنے آقاؤں  کے  قدموں میں قربانی  کے لیے پیش کردیا، ان آقاؤں سے اس کی ایک ہی خواہش ہے کہ وہ ان کا منظور نظر ٹھہرے اور کسی طرح ان کی رضا مندی اسے حاصل ہوجائے، اوراسے مزید کردار ادا کرنے کا حکم دیا جائے ،پھر حکم کی بجاآوری میں جہاں وہ سر زمین مصر میں فساد برپا کرنے میں آخری حدوں تک جائے گا ، وہاں  وہ  خود اور اس کے نقش قدم پر چلنے والےاپنی آخرت برباد کرنے  میں بھی انتہاؤں کا نظارہ کریں گے ۔  وہ برملا اس کا اعلان کرتا پھرتا ہے اور اسلام کو دہشت گردی سے موسوم کرنے میں دشمنان اسلام کے نقطہ نظر  کو  نہ صرف درست سمجھتا ہے، بلکہ اسلام کے خلاف جنگ میں ان کے  طریقہ کار سے بھی متفق ہے۔  اس کی شدید خواہش ہے کہ مسلم دنیا بالخصوص اہل مصر کے قلوب واذہان سے اسلامی عقیدے کو  اکھاڑ دینے  کے سلسلے میں اپنے  کافر آقاؤں کی جد و جہد میں ان کا ہمرکاب بنے ۔ صدر السیسی اسلام اور مسلمانوں کے خلاف جنگ  کے لیے مصر  اور اس کی افواج کو سہولت کار بنانے   میں لگا ہوا ہے ،  جو اسلام کے لیے ڈھال  ہوا کرتے تھے ،جن کی تاریخ اسلام اوراسلامی ریاست کے محافظین کی تاریخ  ہے۔

 

اے مصر کے لوگو! تمہارا یہ دین جسے مغرب ایک دہشت گرد مذہب قرار دیتا ہے ، یہی دین تمہارا طرز زندگی ہے ،آج  جن مسائل کا آپ سامنا کر رہے ہیں ، صرف اسلام ہی ان مسائل کا  درست حل پیش کرتا ہے۔یہ مسائل  مغرب کے پیدا کردہ ہیں، یہ مغرب ہی ہے جس نے تمہیں اپنے اسلام سے دور کردیا جو تمہاری قوت وطاقت کا سرچشمہ اور تمہاری  شان وشوکت اور عظمتِ رفتہ کو پھر سے بحال  کرنے کا  واحد راستہ  ہے۔ تمہارے دشمن کو تمہارے دلوں کے اندر موجود اسلام کی قدر و منزلت کا پوری طرح ادراک ہے ،  تمہارے قلوب و اذہان پر اسلام کی گرفت کی  مضبوطی کا بھی اندازہ  ہے اور یہ کہ تم   صرف اسلام ہی کے ذریعے ظلم وجبر سے چھٹکارے کی آس لگائے ہوئے ہو۔  تمہارے خود رو انقلاب کے بعد اسے معلوم ہوا کہ جب بھی   تم لوگوں کو اپنے دین کے ان  پہلوؤں کو  سمجھنے کا کوئی موقع ملا ، جن کے حوالے سے تمہیں گمراہ کرنے کے لیے اس نے ہزار جتن کیے رکھے تھے ، اور جس کی عملی حقیقت یہ ہے کہ وہی تمہار ا طرز زندگی ہونا چاہیے ،اُسے معلوم ہوا کہ اسلامی شعور اس کی دہائیوں کی محنتوں  کا حاصل  چند سال بلکہ چند مہینوں میں خس وخاشاک کی طرح بہا کر نیست ونا بود کر دیتا ہے۔  اس نے اس مقصد کے لیے بہت محنت کی کہ تمہارے سامنے اپنے دین اور اُن حقوق  کو،جن کی  ضمانت تمہارا دین  دیتا ہے، جاننے تک رسائی کے تمام راستے مسدود کردے۔ اسے اس بات کا بخوبی ادارک ہے کہ جس گھڑی مسلم دنیا کو اپنے دین کی سمجھ آئی  وہ  ان کے اثر ونفوذ کے خاتمہ کا دن ہو گا اور عالم اسلام  کے وسائل کی  جو لوٹ کھسوٹ اس نے جاری رکھی ہوئی ہے، فی الفور    بند کرکے سات سمندر پار اپنے گھر جابسنے پر مجبور ہوگا،  بشرطے کہ  اسے  کوئی ٹھکانہ میسر آئے۔  یہی وجہ ہے کہ اس نے تمہیں اسلام سے دور رکھنے کی کوشش کی  ، اس کی یہ کوشش  اسلام  کی درست سمجھ سے دور رکھنے پر مرکوز رہی، اس کے احکام اور اس کی شریعت  سے جاہل رکھنے  کے لیے  اس نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا ، چونکہ اپنے دین کے ساتھ تمہاری مضبوط وابستگی کا اسے بخوبی ادراک ہے اس لیے   اس کی کوشش رہی  کہ تمہیں اسلام کی ایک  نئی تعبیر اور فہمِ جدید کے اندر محصور کرکے رکھے  ، ایسا اسلام جو ہمارے بنی پاک ﷺ پر نہیں اترا، البتہ وہ  مغرب کا منظورِ نظر اور مغرب اس کا پسندیدہ ہے۔

 

مصر کے اقتدار تک اسلام پسند وں  کو رسائی دینا  پھر ان کے خلاف  بغاوت (Coup) کا ڈرامہ رچانے کا مقصد صرف یہ دکھانا تھا کہ لو یہ تمہارا اسلام ہے، جس کو اقتدار بھی ملا مگر اس کے باوجود ناکام ہوا ،لہٰذا اب اس سے کسی قسم کی امید  بر آنے  کی توقع نہیں رکھنی چاہئے، پھر اسلحہ و بارود، قتل  ،جلاؤ  اور کچل دینے وغیرہ کی طاقت سے خوف کی اس گرتی جھکی دیوار کی مرمت کرنے کی کوشش شروع کی  جس میں انقلاب کے وجہ سے شگاف پڑ گئے تھے ، مغرب نے یہ سب کچھ اس لیے کیا تاکہ تمہارا رشتہ دین سے کاٹ ڈالے، جس کی تاثیر تمہاری زندگیوں میں  اُس وقت بلا خوف وخطر واضح نظر آتی ہے، جب آپ لوگ آزادی  کے کچھ سانس لے لیتے ہو۔  

  

اے کنانہ (مصر) کے لوگو! یہ تمہارے اور تمہاری فوج کے لیے جو تمہارے ہی بیٹوں سے مل کر بنی ہے، باعث شرم ہے کہ ایک ایسا شخص آپ پر مسلط ہو جو اللہ اور اس کے رسول ﷺ کے خلاف اعلان جنگ کرنے والا ہے اور تمہاری دین ودنیا خراب کرنے کے درپے ہے ۔ آپ جانتے ہیں کہ اسی نے آپ کا خون بہایا تھا اور اب وہ اس خون کا نذرانہ اپنے قبلہ وہائٹ ہاؤس میں  بیٹھے اپنے آقاؤں سے یہ درخواست کرتے ہوئے پیش کرنے جارہا ہے،  کہ اب  تم مجھے موقع دو تو سہی ، میں ہی وہ آدمی ہو کہ جب تک مصر کی کرسی پر موجود رہوں اور تمہاری خوشنودی  اور کرم نوازی کا دم بھرتا رہوں، تمہارا  نائب  بن کر اسلام کے خلاف لڑتا رہوں گا۔ وہ انہیں بتاتا ہے کہ وہ ان کا آلہ کار ہے، جس کے ذریعے ان کا تسلط قائم رہے گا ، وہ ان کے اثر ونفوذ  کو وسعت دے گا، خواہ اس کے لیے مسلمانوں کے خون کی قربانی دینا پڑے، تمہاری جنگوں کے لیے اگر اس کو ایندھن بنانے کی ضرورت پیش آئے  اور تمہاری خوشی کے بدلے اس کو قربان کرنا پڑے تو دریغ نہیں کروں گا۔ میر ی کوشش ہوگی کہ سیکولرازم کو مصریوں کا دین  اور ان کی فوج کا عقیدہ بنادوں اور میں ان کے سینوں سے اسلام کو اکھاڑ وں گا۔

 

اے کنانہ کی فوج اور عوام بھائیو! کیا تمہارے اندر کوئی  ایک بھی ایسا راست باز  شخص نہیں جو تمہاری گردنوں پر بیٹھے اس انسان نما مخلوق کو اکھاڑ پھینک دے ؟ امت اور مصر والوں کو اس سے رہائی دلادے، اس کی اور اس کے پیچھے موجود لوگوں کے شر سے ان کے لیے ڈھال بنے؟ کیا تمہارے اندر کوئی ایسا شخص نہیں جو خالص اللہ کے لیے طیش میں آکر اس کی نگاہ قہر آلود  اور چہرے کا رنگ لال پیلا ہوجائے اور سیکولر ازم کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کا عزم مصمم لے کر اٹھے، جس کو مصر تاحال بھگت رہا ہے ۔ پھر وہ مصر کا اقتدار حزب التحریر کے  نوجوانوں کے ہاتھوں میں دیدے تاکہ وہ نبوت کے نقش قدم پر اسلامی خلافت قائم کرکے یہاں اسلامی طرز زندگی کا احیا کریں،  خلافت جو سچ  اور انصاف  کے ستونوں  کو کھڑا کردے گی جو ہماری زندگی سے نا پید ہوچکے ہیں ،  اور  امت کی دولت ، وسائل و منافع پر یورپ کے تسلط اور ان کی لوٹ مار کے سلسلے کو یکسر  ختم کردے گی۔

 

اے کنانہ ( مصر) کے لوگو! مصری حکومت اور اس  کا سربراہ جانتے ہیں کہ اس راکھ کے نیچے دبی  چنگاریاں کسی بھی لمحے بڑی آگ کا پیش خیمہ ثابت ہوسکتی ہیں  اور یہ کہ مصر ایک  تند وتیز انقلاب  کے دہانے پر  کھڑا ہے، جو ہر رکاوٹ کو کچل ڈالےگا۔  ایسے کسی بھی صورتحال سے نمٹنے کے لیے اگر مصر کو جلانے کی ضرورت پڑتی ہے تو اس کے لیے  اس نے  بھر پور تیاری کی ہوئی ہے، تاکہ مصر ماتحتی کی طوق کو نہ اُتار پھینکے۔  یہ بھی واضح ہے کہ یہ انقلاب اس وقت ہی مفید  ہوگا جب وہ امت کے عقیدے سے پھوٹنے والا منصوبہ لے کر اٹھے گا ، یعنی خلافت علی ٰ منہاج النبوۃ  جس کی طرف حزب التحریر دعوت دیتی ہے۔ اب آپ کے پاس صرف  دو راستے ہیں: یا تو اسی منصوبے کو آگے چلائیں جسے حزب التحریر آپ کے پاس لے کر آئی ہے یا پھراسی غلام، بوسیدہ  اور بے رحم نظام کے تحت رہنا پڑے گا جو آپ کی عزت سے کھیلتا ہے، آپ کے حقوق کو  ضائع کرتا ہے اور آپ کے اموال کو لوٹتا ہے۔ یاد رکھیں  اس واضح منصوبے کے بغیر آپ اس کے خلاف کتنے ہی مشتعل ہوجائیں ، انقلاب کا فائدہ یہ بوسیدہ نظام ہی سمیٹے گا اور اس کا پھل اسی کے ہاتھوں میں گرے گا۔ لہٰذا آپ اسی منصوبے کو لے کر اُٹھیں جو آپ کا حقیقی ترجمان ہے اور آپ کی طبیعت ومزاج کے عین مطابق ہے، جس کا سر چشمہ آپ کا  عقیدہ ہے، اس کے بغیرآپ کا کوئی چارۂ کار نہیں ، ورنہ اگر مغرب کے وضع کردہ  دیگر منصوبوں پر عمل  کیا  ، تو ایسا کوئی بھی منصوبہ یا پروگرام آپ کو آپ کے اصل منصوبے  کی تکمیل میں رکاوٹ ثابت ہوگا، ہماری اس دعوت پر غور کریں ورنہ بہت یاد کریںگے،  اور  ہم اپنا معاملہ  اللہ کے سپرد کرتے ہیں۔

 

﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ اسْتَجِيبُواْ لِلّهِ وَلِلرَّسُولِ إِذَا دَعَاكُم لِمَا يُحْيِيكُمْ وَاعْلَمُواْ أَنَّ اللّهَ يَحُولُ بَيْنَ الْمَرْءِ وَقَلْبِهِ وَأَنَّهُ إِلَيْهِ تُحْشَرُونَ﴾

"اے ایمان والو! اللہ اور رسول کی دعوت قبول کرو، جب رسول تمہیں اُس بات کی طرف بلائے جو تمہیں زندگی بخشنے والی ہے۔ اور یہ بات جان رکھو کہ اللہ انسان اور اُس کے دِل کے درمیان آڑ بن جاتا ہے اور یہ کہ تم سب کو اسی کی طرف اکٹھا کرکے لے جایا جائے گا"( الانفال:24)

 

ولایہ مصر میں حزب التحریر کا میڈیا آفس

 حزب التحریرولایہ مصر

المكتب الإعلامي لحزب التحرير
ولایہ مصر
خط وکتابت اور رابطہ کرنے کا پتہ
تلفون: 01015119857- 0227738076
www.hizb.net
E-Mail: info@hizb.net

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

دیگر ویب سائٹس

مغرب

سائٹ سیکشنز

مسلم ممالک

مسلم ممالک